Poetry

Tumhare Khat Men Naya Ek Salam Kis Ka Tha

tumhare khat men naya ik salam kis ka tha

na tha raqib to akhir vo naam kis ka tha

vo qatl kar ke mujhe har kisi se puchhte hain

ye kaam kis ne kiya hai ye kaam kis ka tha

vafa karenge nibahenge baat manenge

tumhen bhi yaad hai kuchh ye kalam kis k tha

raha na dil men vo bedard aur dard raha

muqim kaun hua hai maqam kis ka tha

na puchh-gachh thi kisi ki vahan na av-bhagat

tumhari bazm men kal ehtimam kis ka tha

tamam bazm jise sun ke rah ga.i mushtaq

kaho vo tazkira-e-na-tamam kis ka tha

hamare khat ke to purze kiye paDha bhi nahin

suna jo tu ne ba-dil vo payam kis ka tha

uTha.i kyuun na qayamat adu ke kuche men

lihaz aap ko vaqt-e-khiram kis ka tha

guzar gaya vo zamana kahun to kis se kahun

khayal dil ko mire sub.h o shaam kis ka tha

hamen to hazrat-e-va.iz ki zid ne pilva.i

yahan irada-e-sharb-e-mudam kis ka tha

agarche dekhne vaale tire hazaron the

tabah-hal bahut zer-e-bam kis ka tha

vo kaun tha ki tumhen jis ne bevafa jaana

khayal-e-kham ye sauda-e-kham kis ka tha

inhin sifat se hota hai aadmi mash.hur

jo lutf aam vo karte ye naam kis ka tha

har ik se kahte hain kya ‘dagh’ bevafa nikla

ye puchhe un se koi vo ghulam kis ka tha

تمہارے خط میں نیا اک سلام کس کا تھا

نہ تھا رقیب تو آخر وہ نام کس کا تھا

وہ قتل کر کے مجھے ہر کسی سے پوچھتے ہیں

یہ کام کس نے کیا ہے یہ کام کس کا تھا

وفا کریں گے نباہیں گے بات مانیں گے

تمہیں بھی یاد ہے کچھ یہ کلام کس کا تھا

رہا نہ دل میں وہ بے درد اور درد رہا

مقیم کون ہوا ہے مقام کس کا تھا

نہ پوچھ گچھ تھی کسی کی وہاں نہ آؤ بھگت

تمہاری بزم میں کل اہتمام کس کا تھا

تمام بزم جسے سن کے رہ گئی مشتاق

کہو وہ تذکرۂ ناتمام کس کا تھا

ہمارے خط کے تو پرزے کئے پڑھا بھی نہیں

سنا جو تو نے بہ دل وہ پیام کس کا تھا

اٹھائی کیوں نہ قیامت عدو کے کوچے میں

لحاظ آپ کو وقت خرام کس کا تھا

گزر گیا وہ زمانہ کہوں تو کس سے کہوں

خیال دل کو مرے صبح و شام کس کا تھا

ہمیں تو حضرت واعظ کی ضد نے پلوائی

یہاں ارادۂ شرب مدام کس کا تھا

اگرچہ دیکھنے والے ترے ہزاروں تھے

تباہ حال بہت زیر بام کس کا تھا

وہ کون تھا کہ تمہیں جس نے بے وفا جانا

خیال خام یہ سودائے خام کس کا تھا

انہیں صفات سے ہوتا ہے آدمی مشہور

جو لطف عام وہ کرتے یہ نام کس کا تھا

ہر اک سے کہتے ہیں کیا داغؔ بے وفا نکلا

یہ پوچھے ان سے کوئی وہ غلام کس کا تھا

DAGH DEHLVI

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button