Poetry

Ash.ar Mire Yuun To Zamane Ke Liye Hain

ash.ar mire yuun to zamane ke liye hain

kuchh sher faqat un ko sunane ke liye hain

ab ye bhi nahīñ Thiik ki har dard miTa den

kuchh dard kaleje se lagane ke liye hain

socho to baDi chiiz hai tahzib badan ki

varna ye faqat aag bujhane ke liye hain

ankhon men jo bhar loge to kanTon se chubhenge

ye ḳhvab to palkon pe sajane ke liye hain

dekhun tire hathon ko to lagta hai tire haath

mandir men faqat diip jalane ke liye hain

ye ilm ka sauda ye risale ye kitaben

ik shakhs ki yadon ko bhulane ke liye hain

اشعار مرے یوں تو زمانے کے لیے ہیں

کچھ شعر فقط ان کو سنانے کے لیے ہیں

اب یہ بھی نہیں ٹھیک کہ ہر درد مٹا دیں

کچھ درد کلیجے سے لگانے کے لیے ہیں

سوچو تو بڑی چیز ہے تہذیب بدن کی

ورنہ یہ فقط آگ بجھانے کے لیے ہیں

آنکھوں میں جو بھر لو گے تو کانٹوں سے چبھیں گے

یہ خواب تو پلکوں پہ سجانے کے لیے ہیں

دیکھوں ترے ہاتھوں کو تو لگتا ہے ترے ہاتھ

مندر میں فقط دیپ جلانے کے لیے ہیں

یہ علم کا سودا یہ رسالے یہ کتابیں

اک شخص کی یادوں کو بھلانے کے لیے ہیں

JAAN NISAR AKHTAR

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button