Poetry

Ab To Ghabra Ke Ye Kahte Hain Ki Mar Ja.enge

ab to ghabra ke ye kahte hain ki mar ja.enge

mar ke bhi chain na paaya to kidhar ja.enge

tum ne Thahra.i agar ghair ke ghar jaane ki

to irade yahan kuchh aur Thahar ja.enge

ḳhali ai charagaro honge bahut marham-dan

par mire zakhm nahin aise ki bhar ja.enge

pahunchenge rahguzar-e-yar talak kyuun kar ham

pahle jab tak na do aalam se guzar ja.enge

shola-e-ah ko bijli ki tarah chamka.un

par mujhe Dar hai ki vo dekh ke Dar ja.enge

ham nahin vo jo karen khuun ka da.ava tujh par

balki puchhega khuda bhi to mukar ja.enge

aag dozakh ki bhi ho ja.egi paani paani

jab ye aasi araq-e-sharm se tar ja.enge

nahin pa.ega nishan koi hamara hargiz

ham jahan se ravish-e-tir-e-nazar ja.enge

samne chashm-e-guhar-bar ke kah do dariya

chaDh ke gar aa.e to nazron se utar ja.enge

laa.e jo mast hain turbat pe gulabi ankhen

aur agar kuchh nahin do phuul to dhar ja.enge

rukh-e-raushan se naqab apne ulaT dekho tum

mehr-o-mah nazron se yaron ki utar ja.enge

ham bhi dekhenge koi ahl-e-nazar hai ki nahin

yaan se jab ham ravish-e-tir-e-nazar ja.enge

‘zauq’ jo madrase ke bigDe hue hain mulla

un ko mai-khane men le aao sanvar ja.enge

اب تو گھبرا کے یہ کہتے ہیں کہ مر جائیں گے

مر کے بھی چین نہ پایا تو کدھر جائیں گے

تم نے ٹھہرائی اگر غیر کے گھر جانے کی

تو ارادے یہاں کچھ اور ٹھہر جائیں گے

خالی اے چارہ گرو ہوں گے بہت مرہم داں

پر مرے زخم نہیں ایسے کہ بھر جائیں گے

پہنچیں گے رہ گزر یار تلک کیوں کر ہم

پہلے جب تک نہ دو عالم سے گزر جائیں گے

شعلۂ آہ کو بجلی کی طرح چمکاؤں

پر مجھے ڈر ہے کہ وہ دیکھ کے ڈر جائیں گے

ہم نہیں وہ جو کریں خون کا دعویٰ تجھ پر

بلکہ پوچھے گا خدا بھی تو مکر جائیں گے

آگ دوزخ کی بھی ہو جائے گی پانی پانی

جب یہ عاصی عرق شرم سے تر جائیں گے

نہیں پائے گا نشاں کوئی ہمارا ہرگز

ہم جہاں سے روش تیر نظر جائیں گے

سامنے چشم گہر بار کے کہہ دو دریا

چڑھ کے گر آئے تو نظروں سے اتر جائیں گے

لائے جو مست ہیں تربت پہ گلابی آنکھیں

اور اگر کچھ نہیں دو پھول تو دھر جائیں گے

رخ روشن سے نقاب اپنے الٹ دیکھو تم

مہر و ماہ نظروں سے یاروں کی اتر جائیں گے

ہم بھی دیکھیں گے کوئی اہل نظر ہے کہ نہیں

یاں سے جب ہم روش تیر نظر جائیں گے

ذوقؔ جو مدرسے کے بگڑے ہوئے ہیں ملا

ان کو مے خانے میں لے آؤ سنور جائیں گے

SHEIKH IBRAHIM ZAUQ

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button