Poetry

Asar Us ko Zara Nahin Hota

asar us ko zara nahin hota

ranj rahat-faza nahin hota

bevafa kahne ki shikayat hai

to bhi vada-vafa nahin hota

zikr-e-aghyar se hua ma’lum

harf-e-naseh bura nahin hota

kis ko hai zauq-e-talkh-kami lek

jang bin kuchh maza nahin hota

tum hamare kisi tarah na hue

varna duniya men kya nahin hota

us ne kya jaane kya kiya le kar

dil kisi kaam ka nahin hota

imtihan kijiye mira jab tak

shauq zor-azma nahin hota

ek dushman ki charkh hai na rahe

tujh se ye ai dua nahin hota

aah tul-e-amal hai roz-fuzun

garche ik mudda.a nahin hota

tum mire paas hote ho goya

jab koi dusra nahin hota

hal-e-dil yaar ko likhun kyunkar

haath dil se juda nahin hota

rahm kar ḳhasm-e-jan-e-ghair na ho

sab ka dil ek sa nahin hota

daman us ka jo hai daraz to ho

dast-e-ashiq rasa nahin hota

chara-e-dil siva.e sabr nahin

so tumhare siva nahin hota

kyuun sune arz-e-muztar-e-‘momin’

sanam akhir khuda nahin hota

اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

رنج راحت فزا نہیں ہوتا

بے وفا کہنے کی شکایت ہے

تو بھی وعدہ وفا نہیں ہوتا

ذکر اغیار سے ہوا معلوم

حرف ناصح برا نہیں ہوتا

کس کو ہے ذوق تلخ کامی لیک

جنگ بن کچھ مزا نہیں ہوتا

تم ہمارے کسی طرح نہ ہوئے

ورنہ دنیا میں کیا نہیں ہوتا

اس نے کیا جانے کیا کیا لے کر

دل کسی کام کا نہیں ہوتا

امتحاں کیجیے مرا جب تک

شوق زور آزما نہیں ہوتا

ایک دشمن کہ چرخ ہے نہ رہے

تجھ سے یہ اے دعا نہیں ہوتا

آہ طول امل ہے روز فزوں

گرچہ اک مدعا نہیں ہوتا

تم مرے پاس ہوتے ہو گویا

جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا

حال دل یار کو لکھوں کیوں کر

ہاتھ دل سے جدا نہیں ہوتا

رحم کر خصم جان غیر نہ ہو

سب کا دل ایک سا نہیں ہوتا

دامن اس کا جو ہے دراز تو ہو

دست عاشق رسا نہیں ہوتا

چارۂ دل سوائے صبر نہیں

سو تمہارے سوا نہیں ہوتا

کیوں سنے عرض مضطر مومنؔ

صنم آخر خدا نہیں ہوتا

MOMIN KHAN MOMIN

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button