Poetry

Hangama Hai Kyuun Barpa ThoDi Si Jo Pi Li Hai

hangama hai kyuun barpa thoDi si jo pi li hai

Daaka to nahin maara chori to nahin ki hai

na-tajraba-kari se vaa.iz ki ye hain baten

is rang ko kya jaane puchho to kabhi pi hai

us mai se nahin matlab dil jis se hai begana

maqsud hai us mai se dil hi men jo khinchti hai

ai shauq vahi mai pi ai hosh zara so ja

mehman-e-nazar is dam ek barq-e-tajalli hai

vaan dil men ki sadme do yaan ji men ki sab sah lo

un ka bhi ajab dil hai mera bhi ajab ji hai

har zarra chamakta hai anvar-e-ilahi se

har saans ye kahti hai ham hain to ḳhuda bhi hai

suraj men lage dhabba fitrat ke karishme hain

but ham ko kahen kafir Allah ki marzi hai

ta.alim ka shor aisa tahzib ka ghul itna

barakat jo nahin hoti niyyat ki ḳharabi hai

sach kahte hain shaiḳh ‘akbar’ hai ta.at-e-haq lazim

haan tark-e-mai-o-shahid ye un ki buzurgi hai

ہنگامہ ہے کیوں برپا تھوڑی سی جو پی لی ہے

ڈاکا تو نہیں مارا چوری تو نہیں کی ہے

نا تجربہ کاری سے واعظ کی یہ ہیں باتیں

اس رنگ کو کیا جانے پوچھو تو کبھی پی ہے

اس مے سے نہیں مطلب دل جس سے ہے بیگانہ

مقصود ہے اس مے سے دل ہی میں جو کھنچتی ہے

اے شوق وہی مے پی اے ہوش ذرا سو جا

مہمان نظر اس دم ایک برق تجلی ہے

واں دل میں کہ صدمے دو یاں جی میں کہ سب سہہ لو

ان کا بھی عجب دل ہے میرا بھی عجب جی ہے

ہر ذرہ چمکتا ہے انوار الٰہی سے

ہر سانس یہ کہتی ہے ہم ہیں تو خدا بھی ہے

سورج میں لگے دھبا فطرت کے کرشمے ہیں

بت ہم کو کہیں کافر اللہ کی مرضی ہے

تعلیم کا شور ایسا تہذیب کا غل اتنا

برکت جو نہیں ہوتی نیت کی خرابی ہے

سچ کہتے ہیں شیخ اکبرؔ ہے طاعت حق لازم

ہاں ترک مے و شاہد یہ ان کی بزرگی ہے

AKBAR ALLAHABADI

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button