Poetry

Ab Ke Ham Bichhde To Shayad Kabhi khvabon Men Milen

ab ke ham bichhde to shayad kabhi khvabon men milen

jis tarah sukhe hue phuul kitabon men milen

DhunDh ujde hue logon men vafa ke moti

ye khazane tujhe mumkin hai kharabon men milen

gham-e-duniya bhi gham-e-yar men shamil kar lo

nashsha baDhta hai sharaben jo sharabon men milen

tu khuda hai na mira ishq farishton jaisa

donon insan hain to kyuun itne hijabon men milen

aaj ham daar pe khinche ga.e jin baton par

kya ajab kal vo zamane ko nisabon men milen

ab na vo main na vo tu hai na vo maazi hai ‘farāz’

jaise do shakhs tamanna ke sarabon men milen

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں

جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں ملیں

ڈھونڈ اجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی

یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملیں

غم دنیا بھی غم یار میں شامل کر لو

نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

تو خدا ہے نہ مرا عشق فرشتوں جیسا

دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں

آج ہم دار پہ کھینچے گئے جن باتوں پر

کیا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں میں ملیں

اب نہ وہ میں نہ وہ تو ہے نہ وہ ماضی ہے فرازؔ

جیسے دو شخص تمنا کے سرابوں میں ملیں

AHMAD FARAZ

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button