Poetry

Vo Jo Ham Men Tum Men Qarar Tha Tumhen Yaad Ho Ki Na Yaad Ho

vo jo ham men tum men qarar tha tumhen yaad ho ki na yaad ho

vahi ya.ani va.ada nibah ka tumhen yaad ho ki na yaad ho

vo jo lutf mujh pe the beshtar vo karam ki tha mire haal par

mujhe sab hai yaad zara zara tumhen yaad ho ki na yaad ho

vo na.e gile vo shikayaten vo maze maze ki hikayaten

vo har ek baat pe ruThna tumhen yaad ho ki na yaad ho

kabhi baiThe sab men jo ru-ba-ru to isharaton hi se guftugu

vo bayan shauq ka barmala tumhen yaad ho ki na yaad ho

hue ittifaq se gar baham to vafa jatane ko dam-ba-dam

gila-e-malamat-e-aqriba tumhen yaad ho ki na yaad ho

koi baat aisi agar hui ki tumhare ji ko buri lagi

to bayan se pahle hi bhulna tumhen yaad ho ki na yaad ho

kabhi ham men tum men bhi chaah thi kabhi ham se tum se bhi raah thi

kabhi ham bhi tum bhi the ashna tumhen yaad ho ki na yaad ho

suno zikr hai ka.i saal ka ki kiya ik aap ne va.ada tha

so nibahane ka to zikr kya tumhen yaad ho ki na yaad ho

kaha main ne baat vo koThe ki mire dil se saaf utar ga.i

to kaha ki jaane miri bala tumhen yaad ho ki na yaad ho

vo bigaDna vasl ki raat ka vo na manna kisi baat ka

vo nahin nahin ki har aan ada tumhen yaad ho ki na yaad ho

jise aap ginte the ashna jise aap kahte the ba-vafa

main vahi huun ‘momin’-e-mubtala tumhen yaad ho ki na yaad ho

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہی یعنی وعدہ نباہ کا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہ جو لطف مجھ پہ تھے بیشتر وہ کرم کہ تھا مرے حال پر

مجھے سب ہے یاد ذرا ذرا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہ نئے گلے وہ شکایتیں وہ مزے مزے کی حکایتیں

وہ ہر ایک بات پہ روٹھنا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کبھی بیٹھے سب میں جو روبرو تو اشارتوں ہی سے گفتگو

وہ بیان شوق کا برملا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

ہوئے اتفاق سے گر بہم تو وفا جتانے کو دم بہ دم

گلۂ ملامت اقربا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کوئی بات ایسی اگر ہوئی کہ تمہارے جی کو بری لگی

تو بیاں سے پہلے ہی بھولنا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کبھی ہم میں تم میں بھی چاہ تھی کبھی ہم سے تم سے بھی راہ تھی

کبھی ہم بھی تم بھی تھے آشنا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

سنو ذکر ہے کئی سال کا کہ کیا اک آپ نے وعدہ تھا

سو نباہنے کا تو ذکر کیا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

کہا میں نے بات وہ کوٹھے کی مرے دل سے صاف اتر گئی

تو کہا کہ جانے مری بلا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

وہ بگڑنا وصل کی رات کا وہ نہ ماننا کسی بات کا

وہ نہیں نہیں کی ہر آن ادا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

جسے آپ گنتے تھے آشنا جسے آپ کہتے تھے با وفا

میں وہی ہوں مومنؔ مبتلا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

MOMIN KHAN MOMIN

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button