GhazalPoetry

Ab Mehfil E Ghazal Mein Ghazal Aashna Hai Kaun

Ab Mehfil E Ghazal mein Ghazal aashna hai kaun

Maanaa K aek hum hain magar dusraa hai kaun

Qaatil ne jab pukaara K ahl e wafaa hai kaun

Sab log jab khamosh rahe bol uTha hai kaun

Tum apni anjuman ka zaraa jaayezaaH to lo

Kahne ko to chiraagh bahut the, jala hai kaun

Daa’va sukhan ka sab ko hai lekin tamaam umr

Ek dushman e sukhan se mukhatib raha hai kaun

Sab dekhte jidhar hain udha kya hai kuchh nahi

Hum dekhte jidhar hain udhar dekhta hai kuan

Tasveer e maikada meri ghazloN mein dekhiye

Sanbhla raha hai kaun, nashe mein gira hai kaun

Main ek naqsh e paa hun magar main bataunga

Is raah se jo guzra hai woh qaafila hai kaun

Sab dost aek ek kar ke mujhe chhoRte gaye

Dushman bhi dang hai k ye tanha khaRa hai kaun

Ghar bhi tera, gali bhi teri, shahr bhi tera

Jo chahe jis ko kah de tujhe rokta hai kaun

‘Aajiz’ ye kis se baat karo ho ghazal mein tum

Parda uThao, hum bhi to dekhien chhupa hai kaun

اب محفلِ غزل میں غزل آشنا ہے کون
مانا کہ ایک ہم ہیں، مگر دُوسرا ہے کون


قاتل نے جب پُکارا کہ اہلِ وفا ہے کون
سب لوگ جب خموش رہے، بول اُٹھا ہے کون
تُم اپنی انجُمن کا ذرا جائزہ تو لو
کہنے کو تو چراغ بہت تھے، جلا ہے کون
دعویٰ سُخن کا سب کو ہے لیکن تمام عُمر
اک دشمنِ سخن سے مُخاطب رہا ہے کون
سب دیکھتے جدھر ہیں اُدھر کیا ہے؟ کچھ نہیں!
ہم دیکھتے جِدھر ہیں اُدھر دیکھتا ہے کون
تصویرِ میکدہ میری غزلوں میں دیکھئیے
سنبھلا رہا ہے کون، نشے میں گِرا ہے کون
مَیں ایک نقشِ پا ہُوں مگر مَیں بتاؤنگا
اِس راہ سے جو گزرا ہے وہ قافلہ ہے کون!
سب دوست ایک ایک کرکے مُجھے چھوڑتے گئے
دُشمن بھی دنگ ہے کہ یہ تنہا کھڑا ہے کون
گھر بھی ترا، گلی بھی تری، شہر بھی ترا
جو چاہے جِس کو کہہ دے، تُجھے روکتا ہے کون
عاجؔز یہ کِس سے بات کرو ہو غزل میں تُم
پردہ اُٹھاؤ ہم بھی تو دیکھیں چُھپا ہے کون

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button