Poetry

Aa Gaya Tha Wo Khush Khesaal Pasand

Aa gaya tha wo khush khesaal pasand

Thi hamari bhi kya kamaal pasand

Haif bad-soorati rawayyoN ki

Haaye dil tha mera jamaal pasand

Kyun banaya tha Theekra dil ko

Kyun kiya saaghar e sefaal pasand

Theek hai main nahi pasand unhein

Lekin is darja paayemaal pasand??

Sach na kahiye K sach hai sabr talab

Log hote hain ishte’aal pasand

Haan mujhe aaj bhi pasand hai woh

Is ko kahte hain lazawaal pasand

Hilm hai ahl e ilm ka shewaa

Jaah walon ko hai jalaal pasand

Wasl ko hijr, naagehaani maut

Hijr ko mausam e wesaal pasand

Fikr e duniya nahi mujhe Ahmad

Apni masti aur apni khaal pasand

آ گیا تھا وہ خوش خصال پسند
تھی ہماری بھی کیا کمال پسند

حیف! بد صورتی رویّوں کی
ہائے دل تھا مرا جمال پسند

کیوں بنایا تھا ٹِھیکرا دل کو
کیوں کیا ساغرِ سفال پسند

ٹھیک ہے میں نہیں پسند اُنہیں
لیکن اس درجہ پائمال پسند

سچ نہ کہیے کہ سچ ہے صبر طلب
لوگ ہوتے ہیں اشتعال پسند

ہاں مجھے آج بھی پسند ہے وہ
اس کو کہتے ہیں لازوال پسند

حلم ہے اہلِ علم کا شیوہ
جاہ والوں کو ہے جلال پسند

وصل کو ہجر ، ناگہانی موت
ہجر کو موسمِ وصال پسند
 
فکرِ دنیا نہیں! مجھے احمدؔ
اپنی مستی اور اپنی کھال پسند

MOHAMMAD AHMAD

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button