Poetry

Main Khiradmand Rahoon Ya Tera Vahshi Ho Jaaoon

MaiN khiradmand rahooN ya tera vahshi ho jaaooN

Jo bhi hona hai mujhe ishq meiN jaldi ho jaaooN

Zindagi chaak ki gardish ke siva kuchh bhi nahiN

MaiN agar koozaagari chhoR dooN mitti ho jaaooN

Phir se le jaaye meri zaat se tu ishq udhaar

Aur maiN phir se tere husn pe baaqi ho jaaooN

Koi dam tu mere chehre pe khushi ban ke ubhar

Koi dam maiN tere chehre ki udaasi ho jaaooN

Ya to dariyaa meiN badal jaaooN ki lahreiN uttheiN

Ya bagooloN ka kahaa maan looN aaNdhi ho jaaooN

Uski jaanib se koi hijr mujhe aa ke lage

Aur maiN maa’rka-e-ishq meiN zakhmi ho jaaooN

Jabr ki tarah koi jabr karooN apne saath

KyoN na kuchh der ko maiN apne pe haavi ho jaaooN


میں خرد مند رہوں یا تیرا وحشی ہو جاوں
جو بھی ہونا ہے مجھے عشق میں جلدی ہو جاوں

زندگی چاک کی گردش کے سوا کچھ بھی نہیں
میں اگر کوزہ گری چھوڑ دوں مٹی ہو جاوں

پھر سے لے جائے میری ذات سے تُو عشق ادھار
اور میں پھر سے تیرے حسن پہ باقی ہو جاوں

کوئی دم تُو میرے چہرے پہ خوشی بن کے ابھر
کوئی دم میں تیرے چہرے کی اداسی ہو جاوں

یا تو دریا میں بدل جاوں کہ لہریں اٹھیں
ہا بگولوں کاکہا مان لوں آندھی ہو جاوں

اس کی جانب سے کوئی ہجر مجھے آ کے لگے
اور میں معرکہ ء عشق میں زخمی ہو جاوں

جبر کی طرح کوئی جبر کروں اپنے ساتھ
کیوں نا کچھ دیر کو میں اپنے پہ حاوی ہو جاوں

Abhishek Shukla

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Check Also
Close
Back to top button